توہین رسالت کے ملزم کی پشاور کی عدالت میں ہلاکت پر امریکہ کا اظہار تعزیت

ہم امریکی شہری طاہر نسیم کے اہلخانہ سے اظہار تعزیت کرتے ہیں جو پاکستان کے اندر ایک کمرہ عدالت کے اندر مارا گیا،ہم پاکستان سے درخواست کرتے ہیں کہ وہ فوری طور پر کاروائی کرے۔ امریکی سٹیٹ ڈپارٹمنٹ کا ٹویٹ



امریکا (کے ایچ آئی سٹی نیوز کراچی 31 جولائی 2020ء) امریکا نے پاکستان سے توہین رسالت کے ملزم کی پشاور کی عدالت میں مارے جانے کے واقعہ پر کاروائی کا مطالبہ کر دیا۔تفصیلات کے مطابق توہین رسالت کے ملزم کی پشاور کی عدالت میں ہلاکت پر امریکہ نے اظہار تعزیت کیا ہے۔ادھر تو امریکی اسٹیٹ ڈیپارٹمنٹ نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر ٹویٹ کرتے ہوئے رسالت کے ملزم کی عدالت میں ہلاکت پراظہار تعزیت کیا ہے۔
ٹویٹ میں لکھا ہے کہ ہم امریکی شہری طاہر نسیم کے اہلخانہ سے اظہار تعزیت کرتے ہیں۔جو پاکستان کے اندر ایک کمرہ عدالت کے اندر مارا گیا تھا۔ہم پاکستان سے درخواست کرتے ہیں کہ وہ فوری طور پر کاروائی کرے اور ایسی اصلاحات پر عمل کریں جو اس طرح کے سانحہ کو دوبارہ ہونے سے روکے ۔

توہین رسالت کے ملزم کی پشاور کی عدالت میں ہلاکت پر امریکہ کا اظہار تعزیت

ہم امریکی شہری طاہر نسیم کے اہلخانہ سے اظہار تعزیت کرتے ہیں جو پاکستان کے اندر ایک کمرہ عدالت کے اندر مارا گیا،ہم پاکستان سے درخواست کرتے ہیں کہ وہ فوری طور پر کاروائی کرے۔ امریکی سٹیٹ ڈپارٹمنٹ کا ٹویٹ

واضح رہے کہ گذشتہ روز توہین رسالت کے ملزم کو عدالت میں جج کے سامنے گولی مار دی گئی فائرنگ سے توہین رسالت کا ملزم موقع پر جاں بحق ہوگیا۔

واقعے کے بعد ملزم کو کمرہ عدالت سے گرفتار کرلیا گیا۔میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا کہ فائرنگ کا واقعہ جوڈیشل کمپلیکس پشاور میں واقع ایڈیشنل سیشن جج شوکت اللہ کی عدالت نمبر14 میں پیش آیا وقوعہ کے وقت جج شوکت اللہ بھی عدالت میں موجود تھے مقتول پر تعزیرات پاکستان کے سیکشن 295کے تحت توہین رسالت کا مقدمہ درج تھا سماعت کے موقع پرمقتول طاہر نسیم کو عدالت میں پیش کیاگیااس دوران ملزم خالد ساکن بورڈ بازار اچانک کمرہ عدالت میں داخل ہوا اور مقتول کے قریب پہنچ کر گولی ماردی جسکے نتیجے میں طاہر نسیم موقع پر ہی جاں بحق ہوگیا واقعے کے فوراً بعد عدالت میں بھگدڑ مچ گئی تاہم موقع پر موجود پولیس نے ملزم خالد کو گرفتار کیا اور متعلقہ تھانے منتقل کرکے اسکے خلاف مقدمہ درج کرلیا۔